Home / آس پاس / چیچہ وطنی : تھانہ صدر کی حدود میں کمسن ملازمہ پر تشدد، مقدمہ درج
chichawatni news

چیچہ وطنی : تھانہ صدر کی حدود میں کمسن ملازمہ پر تشدد، مقدمہ درج

چیچہ وطنی (طاہر جواد سے) تھانہ صدر چیچہ وطنی کی حدود میں 15 سالہ گھریلو ملازمہ بچی پر مبینہ تشدد کا واقعہ سامنے آگیا، تفصیلات کے مطابق چیچہ وطنی تھانہ صدر کے علاقہ مدینہ ٹاؤن میں محکمہ انہار کے پٹواری حنیف اور اس کی بیوی ساجدہ مبینہ طور پر 15 سالہ اقصیٰ کو 3 مہینے بدترین مبینہ تشدد کا نشانہ بناتے رہے . ویڈیو دیکھئے:

متاثرہ بچی اقصیٰ کے مطابق مجھے پٹواری حنیف گجر اور اس کی بیوی ساجدہ نے 3 مہینے قید میں رکھا اور کام پسند نہ آنے پر مجھے پلاسٹک کے پائپوں اور ڈنڈوں سے تشدد کا نشانہ بناتے رہے اور جب میں بیمار ہوتی تب بھی مجھے مارتے اور دوائی بھی نہیں لے کر دیتے تھے. ان چار مہینوں میں مجھے تنخواہ بھی نہیں دی گئی، گزشتہ رات دونوں میاں بیوی نے میرے اوپر تشدد کی انتہا کردی مجھے ساری رات سونے نہیں دیا اور تشدد کا نشانہ بناتے رہے، ان 3 مہینوں میں مجھے کبھی اپنی ماں سے ملنے نہیں دیا گیا.

مزید اس حوالے سے بچی کا کہنا تھا کہ آج دونوں میاں بیوی کے درمیان کسی بات پر جھگڑا ہوا تو میں اس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے اپنے گھر بھاگ گئی.
اسی بارے میں مزید بچی کی والدہ فردوس کا کہنا تھا کہ میں اور میری بچی دونوں پٹواری کے گھر کام کرتی تھیں جب انہوں نے مجھے تنخواہ نہیں دی تو ہم نے کام کرنا چھوڑ دیا، لیکن انہوں نے میری بچی میرے حوالے نہیں کی. جب بھی ان سے اپنی بچی کا مطالبہ کرتی تو پٹواری اور اس کی بیوی مجھے ڈراتے اور دھمکاتے کہ تیری بچی اور تو نے ہمارے زیوارات چوری کیے ہیں، ہم اثرورسوخ والے ہیں، ہم آپ کو پولیس کے حوالے کر دیں گے.
ان 3 مہینوں میں مجھے کبھی اپنی بچی سے ملنے نہیں دیا گیا، بچی کی والدہ فردوس کا مزید کہنا تھا میرا خاوند فوت ہو چکا ھے، ہم بے بس ہیں. میری بیٹی پر چار مہینے ظلم کے پہاڑ توڑے گئے ہیں.
فردوس اور اسی کی بیٹی اقصیٰ نے اپنے اہلخانہ کے ہمراہ احتجاج کرتے ہوئے ڈی سی ساہیوال اور ڈی پی او ساہیوال سے اپیل کی ھے کہ پٹواری حنیف کو فوری معطل کیا جائے اور دونوں میاں بیوی کو گرفتار کر کے مقدمہ درج کیا جائے اور ہماری داد رسی کی جائے۔

فالو اپ: چیچہ وطنی تھانہ صدر پولیس نے اقصیٰ کے بھائی عمر کی مدعیت میں مقدمہ درج کر لیا ہے. مقدمہ کی کاپی نیچے دی گئی ہے.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے