Home / ورلڈ / دبئی : وزٹ ویزہ پر آئے بھکاریوں کے خلاف کریک ڈاؤن، مفلس ظاہر کرنے والوں سے کروڑوں برآمد
Beggers in dubai uae

دبئی : وزٹ ویزہ پر آئے بھکاریوں کے خلاف کریک ڈاؤن، مفلس ظاہر کرنے والوں سے کروڑوں برآمد

دُبئی(یواےای اردو) دُبئی پولیس کی جانب سے انسدادِ گداگری مہم کے دوران ایک ایسا غیر مُلکی گرفتار کیا گیا ہے جس نے ایک ماہ کے دوران بھیک مانگ مانگ کر ایک لاکھ درہم سے زائد رقم اکٹھی کر لی تھی۔
تفصیلات کے مطابق القوز کے علاقے سے گرفتار کیا گیا یہ بھکاری وزٹ ویزہ پر دُبئی آیا تھا۔ پولیس ڈیپارٹمنٹ کے ایک اعلیٰ عہدے دار بریگیڈیئر الہاشمی نے بتایا کہ مملکت میں زیادہ تر بھکاریوں کی اقسام میں سے کچھ وزٹ ویزہ پر آتے ہیں جبکہ کچھ سیاحتی کمپنیوں کی جانب سے بُلائے جاتے ہیں، جن کے گداگری کے پیشے سے منسلک ہونے کی چھان بین نہیں کی جاتی۔
انہوں نے بتایا کہ اگر کسی سیاحتی کمپنی کی جانب سے بُلایا گیا بھکاری پکڑا جائے تو اس کمپنی پر دو ہزار درہم کا جرمانہ عائد کیا جاتا ہے جبکہ دوبارہ ایسی حرکت کے ارتکاب پر کمپنی کو بلیک لسٹ کر دیا جاتا ہے۔

بریگیڈیئر الہاشمی کا مزید کہنا تھا کہ ر مضان کے مہینے میں مملکت میں گداگروں کی تعداد میں بے پناہ اضافہ ہو جاتا ہے، جن کی زیادہ تر تعداد وزٹ ویزوں پر امارات آتی ہے۔
انہیں گداگری سے روکنے کے لیے پولیس کی جانب سے کریک ڈاؤن کیا جاتا ہے اور گرفتار کر لیا جاتا ہے۔ اس بار بھی اس کریک ڈاؤن کے سلسلے میں پولیس کی ٹیمیں وردی میں اور سادہ کپڑوں میں مختلف علاقوں کا گشت کررہی ہیں، خاص طور پر بازاروں، رہائشی علاقوں ، رمضان ٹینٹوں، عبادت گاہوں اور پارکنگ ایریاز کو تلاش کیا جاتا ہے جہاں گداگروں کی بڑی تعداد اکٹھی ہوتی ہے۔
انہوں نے بتایا کہ ایک لاکھ درہم ماہانہ کمانے والے دولت مند بھکاری کے علاوہ ایک خاتون بھی پکڑی گئی جس نے لوگوں کی ہمدردیاں سمیٹنے کے لیے ایک چھوٹا بچہ اور ایک شیر خوار بچہ بھی ساتھ رکھا ہوا تھا۔
بریگیڈیئر ہاشمی نے کہا کہ ایسے افراد جو شدید تنگدستی کا شکار ہونے کے باعث مالی امداد کے خواہش مند ہیں اُنہیں چاہیے کہ وہ فلاحی اداروں اور مخیر حضرات سے رابطہ کریں جو نیکی کے کاموں میں پیش پیش ہوتے ہیں۔
2018 میں دُبئی میں 243 افراد بھیک مانگتے پکڑے گئے تھے، جن میں سے مرد 136 جبکہ خواتین 107 تھیں۔ 2017 میں 653 بھکاری گرفتار کیے گئے تھے، 2016 میں 1,021 جبکہ 2015 میں گرفتار کیے گئے بھکاریوں کی گنتی 1,405 ریکارڈ کی گئی تھی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے